کبھی دیکھا ہے ہم نے حُسنِ شاعری کو

 

کبھی دیکھا ہے ہم نے حُسنِ شاعری کو

کہ موجِ حالِ دسترس، الوداع عاجزی کو؟

 

وہ جو سکونِ قلبِ مطمئن ہے فضاؤں میں

ہے کون یاں جو توڑے اس وفائے شعاری کو

 

میں تو ہوں ظاہر یہاں اپنی زبانِ غم میں

سوا میرے کرے کون عرض، لبِ خاطری کو؟

 

جو پوچھو چمن میں بُجھتی ہوئی رونق کیسی

کوئی عکسِ عرض نہ سوجھے کسی دیدہ وری کو

 

ان کا مقام نہیں کوئی، نہ آہٹ ہی ہے

جو بھول گئے رسم شرم و حیائی کو

 

وہ جو درس تیرے در پہ رکھ چلتا ہے

کیا کوئی داد ملے کسی علم شناسی کو؟

 

گر اخذِ رنگِ شاعری ہے مطلوبِ من، فرخ

تو بجا نہیں دھڑکنِ دل مترادفِ خیالی کو

Farrukh Ali Hassan is 19 years old and based in Okara, Pakistan. He started writing poems (in English, Urdu, and Punjabi) nearly four years ago and extended his writing capabilities to short stories in 2023. He is interested in writing different forms of poetry and short stories. He loves reading classics. Most of his writings pertain to nature, love, morality, and the beauty of things.

Scroll to Top