Ghazal 2

By Sukhan

 

جگ مگ ستاروں کا جھرمٹ کچھ ہم سا ہے

ماضی کا اجالا ہی رہ گیا کچھ نہ ہم سا ہے

 

جلتے آشیانے چھوڑ آَئے ہم ندیوں پار

ہم ناتوانوں کی غیرت کا حال بے دم سا ہے

 

منتظر فردا یہ کمبخت کب پھول کہٖلائے گا

باغباں کا دست ارحم کچھ بے کرم ہم سا ہے

 

سرکشی کی ان ہواؤں کو کہو نہ ستائیں

شہرِِراکھ کے انگاروں میں ابھی دم سا ہے

 

گلِ اورنگ رہیں گے سرخرو اِس چمن میں

لہوجنون سے زنداں میں ابھی کچھ ادھم سا ہے

 

اجڑ گیا سب اس مکان سے تم کیا ڈھونڈتے ہویہاں

ملول ہے اب روگ بھی وہاں بس تھوڑا غم سا ہے

 

مجھ پرگِراں گزرا ہے یہ سفرِناتمام اے ہمدم

سانسوں کا یوں چلنا دعاوَاں کا بھرم سا ہے

 

کس کو سناؤ گے اب اپنی غزل اے سخن اس بدیس میں

یہ شہر ہے ناآشناوں کا یہاں کوئی نا ہم سا ہے

Pirzada Asjal Alvi is known by his takhallus Sukhan. A Computer Science postgraduate at NUST, he is deeply influenced by Karachis Mushaira circuit. His father and grandfathers, skilled in Urdu, Persian, and Arabic, kindled his passion while Saleem Ahmad and Maulvi Muhammad Yahya Tanha inspired him to take their mantle and reach new heights. Qawwali, Urs celebrations, and migration tales also shape his work. Influenced by poets like Daagh, Kaleem Aajiz, Habib Jalib, Suroor Barabankvi, Khumar Barabankvi, and Pirzada Qasim, he imbibes their ideas in his work. He explores gore and mystery fiction when he writes in English. He has featured in Teen Vogue and BBC World.

Scroll to Top