Ghazal 1

By Sukhan

 

ایذا رساں یہ غم روزگار جاتا ہی نہیں

ہم بےبسوں کوغمِ جاناں آزماتا ہی نہیں

 

ٹھہرجاتا ہوں یاد کرکے تجھے میں بھی

دلِ نتواں تجھے بھول جاتا ہی نہیں

 

یہ شاخِ دل مرجھا گئی شجر سے دور

ان شمعوں میں رنگینی کا رنگ آتا ہی نہیں

 

دل جلایا ہے میں نے اجالے کے لیے دور گھر سے

ان بھری گلیوں میں اجالا پھر بھی آتا ہی نہیں

 

ہم خاک نشینوں کا خون رہے گا شاداب

بلبل کے لب پہ کوئی اور نام آتا ہی نہیں

 

مقتل کے حالات توپوچھ آؤ اُن سے اے ناصح

عرصہ ہوا گلی سے کوئی جنازہ جاتا ہی نہیں

 

اٹھو سخن اکیلے نہ رہ جانا اس شہر بےوفا میں

گنگا بھول گئی تمہیں اور جمنا کوتمہارا نام آتا ہی نہیں

Pirzada Asjal Alvi is known by his takhallus Sukhan. A Computer Science postgraduate at NUST, he is deeply influenced by Karachis Mushaira circuit. His father and grandfathers, skilled in Urdu, Persian, and Arabic, kindled his passion while Saleem Ahmad and Maulvi Muhammad Yahya Tanha inspired him to take their mantle and reach new heights. Qawwali, Urs celebrations, and migration tales also shape his work. Influenced by poets like Daagh, Kaleem Aajiz, Habib Jalib, Suroor Barabankvi, Khumar Barabankvi, and Pirzada Qasim, he imbibes their ideas in his work. He explores gore and mystery fiction when he writes in English. He has featured in Teen Vogue and BBC World.

Scroll to Top